جنگ بدر جذبوں کی جیت کا دن تھا ہارون الرشید تبسم

سرگودھا : پاکستان ادب اکیڈمی کے چئیرمین ڈاکٹر ہارون الرشید تبسم نے کہا کہ 17رمضان المبارک 2ہجری کو میدانِ بدر میں مجاہدین نے ثابت کر دیاکہ قوت ہار جاتی ہے اور جذبے جیت جاتے ہیں۔ جب مجاہد عزم و یقیں کے ساتھ تلوار اُٹھاتا ہے تو اللہ تعالیٰ کی فتح و نصرت اُس کا دست و بازو بن جاتی ہے۔انہوں نے کہا کہ 313 مجاہدین نے بے سروسامانی کے عالم میں ہزاروں کفار کو شکست دے کر ہمارے لیے راہِ حیات کا تعین کیاہے۔یہی وجہ ہے کہ مسلمان قوت ایمانی سے سرشار ہو کر بے تیغ بھی لڑنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ڈاکٹر ہارون الرشید تبسم نے یومِ بدر کے حوالہ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ میدانِ بدرمدینہ سے 80میل کے فاصلے پر واقع ہے ، جہاں عالمِ اسلام کے عظیم جرنیل، محسنِ انسانیت ، محمد عربی ﷺ نے اپنی حکمتِ عملی سے حملہ آوروں کو شکست فاش دی۔ دنیا کے بہت سے سپہ سالار آج ہمارے سپہ سالارِ اعظم ، محمد مصطفیﷺ سے رہنمائی حاصل کر رہے ہیں اور کرتے رہیں گے۔ آج بھی اسلام مخالف قوتیں مجتمع ہو رہی ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہمارے پڑوسی ملک بھارت نے انسانیت سوز مظالم کا سلسلہ شروع کر رکھا ہے ۔کشمیر میں ہونے والے مظالم دیکھ کر بھی ایٹمی قوتوں کا خاموش رہنا ایک سوالیہ نشان ہے۔مسلمانوں کو متحد ہو کر مخالف قوتوں کے مظالم کا مقابلہ کرنے کے لیے ہمہ وقت تیار رہنا چاہیے۔ اِن حالات میں ہمیں میدانِ بدر کے غازیوں اور شہیدوں سے رہنمائی حاصل کرنا چاہیے۔ یومِ بدر ہمارے اذہان پر دستک دے رہا ہے کہ ہم آج کہاں کھڑے ہیں اور اللہ تعالی کی نصرت ہم سے دور کیوں ہے اگر آج بھی جذبہ ایمانی سے سرشار ہو کر کلمہ حق کو بلند کریں تو مسلم دشمن قوتیں پسپائی کا شکار ہو جائیں گئیں۔اور کورونا جیسی عالمی وباء سے نجات کے لئے اللہ تعالی کے سامنے سجدہ ریز ہو کر مانگی جانے والی دعائیں رنگ لائیں گئیں۔
Unn

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Powered by Dragonballsuper Youtube Download animeshow