سرگودہا ڈویژن کا 99 فی صد علاقہ ٹڈی دل سے پاک ہوگیا کمشنر سرگودہا فرح مسعود

سرگودہاڈویژن کا 99 فیصد رقبہ ٹڈی دل سے پاک ہو گیا ۔ کمشنر ڈاکٹر فرح مسعود
بھکر کا 150 مربع ہیکٹر‘خوشاب کا 345مربع ہیکٹر ٹڈی دل کے حملوں کی زدمیں ہے جسے جلد کلیئر کر لیاجائیگا۔ڈاکٹر فرح مسعود
آرمی ‘سول انتظامیہ کے پاس مشینری ‘ کیمیکل کی کوئی کمی نہیں ۔ٹڈی دل کے خاتمہ کیلئے فضائی آپریشن بھی زیر غور ہیں ۔بریگیڈیر احسن وقاص

سرگودہا(19 مئی 2020)۔کمشنر سرگودہا ڈویژن ڈاکٹر فرح مسعود نے کہا ہے کہ آرمی او رسول انتظامیہ نے مربوط اقدامات کے ذریعے ٹڈی دل سے متاثرہ رقبہ کے 99 فیصد کو محفوظ بنایا جبکہ میانوالی کے پندرہ دیہاتوں کو ٹڈی دل سے مکمل طو رپر پاک کیاگیا ۔ضلع سرگودہا میں 65ہزار ایکڑ رقبہ پر انسداد ٹڈی دل اقدامات کئے گئے اور صوبے کے بڑے اناج کے پیداواری علاقے کو تحفظ فراہم کیاگیا ۔ان خیالات کااظہار انہوں نے ٹڈی دل کے حوالہ سے منعقدہ اعلیٰ سطحی اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا ۔ اجلاس میں سیکرٹری ٹرانسپورٹ پنجاب اسد گیلانی ‘ بریگیڈیر احسن وقاص ‘ سرگودہا ‘میانوالی ‘ بھکر ‘ خوشاب ‘جھنگ اورٹوبہ ٹیک سنگھ کے ڈپٹی کمشنر ‘ ڈائریکٹر زراعت فیض محمد کندی ‘ ایڈیشنل کمشنر شہباز نقوی او ردیگر متعلقہ سول وآرمی افسران بھی موجود تھے ۔ کمشنر نے کہاکہ سرگودہا ڈویژن اناج کی پیداوار کا اہم خطہ ہے یہاں چنے کی فصل وسیع رقبے پر کاشت کی جاتی ہے جس کو ٹڈی دل کے حملوں کے خدشات تھے ۔ انہوں نے کہاکہ ای ایف او کی اطلاعات کے مطابق ٹڈی دل کے حملے سے پاکستان بالخصوص پنجاب میںاناج کے قحط کا اندیشہ تھا اگر آرمی اور سول انتظامیہ کاوشیں نہ کرتی تو ملک کو انا ج کی قلت کاسامنا کرناپڑتا۔انہوں نے کہاکہ ٹڈی دل جھنڈ کی شکل میں حملہ آور ہوئی جسے تیز تر اور شدید سپرے کے ذریعے تلف کیاگیا ۔انہوں نے کہاکہ تاحال بھی ضلع بھکر کا 150 مربع ہیکٹر اور ضلع خوشاب کا 345مربع ہیکٹر ٹڈی دل کے حملوں کے نشانے پر ہے جسے جلد کلیئر کر لیاجائیگا ۔ اجلاس میں سیکرٹری ٹرانسپورٹ اسد گیلانی نے بتایا کہ ماہرین کے مطابق اس سال جنوری میں صوبہ پنجاب کا پندرہ فیصد ‘بلوچستان کا 25 فیصد او رسندھ کا 60 فیصد فوڈ باسکٹ کا علاقہ ٹڈی دل کا نشانہ تھا اگر حکومت بروقت اقدامات نہ کرتی تو کسانوں اور ملک کو اناج کی قلت کے شدید خطرات لاحق ہوتے ۔انہوں نے آرمی او رسول انتظامیہ کی کاوشوں کو سراہا ۔ قبل ازیں بریگیڈیر احسن وقاص نے بتایاکہ آرمی او رسول انتظامیہ کے پاس مشینری اور کیمیکل کی کوئی کمی نہیں ۔ٹڈی دل کے خاتمہ کیلئے فضائی آپریشن بھی زیر غور ہیں جس کیلئے سات ایئر جیٹ اور ہیلی کاپٹر مشینری سے لیس کئے جارہے ہیں ۔انہوں نے بتایا کہ اس وقت ٹڈی دل زیر کنٹرول ہے تاہم ان کی گزرگاہوں پر انڈے او رلاروے کی موجودگی کے خدشات ظاہر کئے جارہے ہیں جن کی تلفی کیلئے آرمی اور سول دستوں کو ہدایات جاری کی جاچکی ہیں ۔ انہوں نے کہاکہ انتظامیہ کی اولین ترجیح نوخیز حملوں پر ہونی چاہیے جبکہ جاری ضابطوں پر باقاعدگی سے عمل جاری رکھاجائے۔ انہوں نے بتایا کہ ٹڈی دل کی آخری منزل ہندوستانی صحرائی علاقہ راجستھان ہے جہاں یہ اپنی پیداوار بڑھا کر دوبارہ پاکستان کو متاثر کر سکتا ہے لہذا اس کا مکمل خاتمہ ہمارے فائدے میں ہے ۔اجلاس میں چاروں اضلاع کے ڈپٹی کمشنروں نے ٹڈی دل کے حوالے سے اقدامات اور تفصیلات سے آگاہ کیا ۔
٭٭٭٭٭

سرگودہا(19 مئی 2020)اتائیوں کے دوکانیں خود ڈی سیل کرنے پر ان کے خلاف ڈرگ انسپکٹر کی کاروائی رکوانے کے لئے موجودہ اور سابق حکمران جماعت میدان میں آ گئی اور متعلقہ افسران پر دباو¿ بڑھا دیا۔ اتائیوں کے خلاف کاروائی کرتے ہوئے ڈرگ انسپکٹر فہیم ضیائ نے میڈیکل سٹورز مالکان کے خلاف تھانہ بھیرہ میں رپورٹ کر کے ان کے خلاف ایف آئی آر کا اندراج کرادیا اور ہیلتھ کیئر کمیشن نے ان اتائیوں کو 21 مئی کو طلب کر لیا مگر اتائیوں نے سیاسی پشت پناہی سے اپنے میڈیکل سٹوروں کو خود ہی ڈی سیل کر کے کام شروع کر دیا جس پر ڈرگ انسپکٹر نے میڈیکل سٹورز دوبارہ سیل کر کے تھانہ بھیرہ رپورٹ کر کے افسران بالا کو صورتحال سے آگاہ کیامگر اتائیوں نے 2 گھنٹے بعد ہی پھر سیلیں توڑ دیں۔ قانون شکن عناصر کے خلاف کاروائی روکنے کے لئے سیاسی کارکن پھر حرکت میں آ گئے ہیں مگر بھیرہ پولیس نے افسران بالا کی ہدایت پراتائیوں کے خلاف مقدمات درج کر لئے ہیں۔
٭٭٭٭٭

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Powered by Dragonballsuper Youtube Download animeshow